87

وزیر آباد: قوم کا مستقبل نوجوانوں کے مضبوط کردار سے وابستہ ہے. حکیم لطف اللہ، ڈاکٹر شاہد چشتی

وزیرآباد (نیاز احمد چوہان سے) پاکستان سوشل ایسوسی ایشن کے سیکریٹری جنرل حکیم لطف اللہ نے کہا ہے منشیات قوت مدافعت اور قوت احساس کو ختم کر دیتی ہے۔ سگریٹ کا دھواں بچوں کی بینائی متاثر کر رہا ہے۔ انسان کواشرف المخلوقات ہونے کافائدہ اٹھانا چاہئے۔ ترک منشیات کے ادارے ماں کے آغوش کی حیثیت رکھتے ہیں۔ پاکستان سوشل ایسوسی ایشن (پی ایس اے) کی بنیاد قائد اعظم نے 1930میں رکھی تھی۔ قوم کا مستقبل نوجوانوں کے مضبوط کردار سے وابستہ ہے۔ پی ایس اے پاکستان کو ایف اے ٹی ایف سے نکالنے میں بھی مدددے رہی ہے۔ وہ یہاں انجمن فلاح نوجواناں کے زیر اہتمام انسداد منشیات کے حوالے سے منعقدہ تقریب سے خطاب کر رہے تھے جس کی صدارت حاجی محمد شفیق نے کی۔

حکیم لطف اللہ نے کہا کہ پاکستان سوشل ایسوسی ایشن کی بنیاد 1930میں قائد اعظم نے رکھی تھی۔ پی ایس اے کا ماٹو نوجوانوں کی اصلاح ہے۔ انہوں نے کہا کہ مضبوط پاکستان باکردار اور مضبوط نوجوانوں سے بنے گا. لیکن نوجوانوں کو منشیات کے جال میں پھنسا یا جا رہا ہے۔

سگریٹ اور منشیات کے بہت سے ضمنی نقصانات بھی ہیں۔ ہر 13واں بچہ تمباکو کے دھویں سے متاثر ہے اور ان کی بینائی پر اثر انداز ہوتا ہے۔ تمباکو کے 250عناصر کینسر کا باعث بنتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ قوت ارادی سے منشیات پر قابو پایا جا سکتا ہے۔ اگر معروف باکسر مائک ٹائی سن منشیات ترک کر کے چیمپئن بن سکتا ہے اور ہالی ووڈ کی فلموں میں ہیرو آسکتا ہے تو ہر نوجوان اس برائی سے بچ کر معاشرے کا کار آمد رکن بن سکتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ترک منشیات کے ادارے ماں کی آغوش کی حیثیت رکھتے ہیں اور خندہ پیشانی سے عادی مریضوں کو سنبھلنے کا موقع فراہم کر تے ہیں۔انہوں نے کہا کہ اللہ کی نعمتوں کو برائیوں میں بدل کر خود کو ضائع نہ کریں اور نعمت کو زحمت نہ بنائیں۔

ڈاکٹر شاہد مرتضٰی چشتی سیکرٹری جنرل انٹرنیشنل چشتی اتحاد نے کہا کہ انسان کو اشرف المخلوقات ہونے کا فائدہ اٹھانا چاہئے اور خود کو ایسی عادتوں سے بچانا چاہئے جو ان کی شناخت کھو دیتی ہیں اور لوگ انہیں تضحیک آمیز نام دے دیتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ منشیات نوجوانوں میں احساس اور قوت مدافعت میں کمی لاتی ہے۔

اس موقع پر حاجی محمد شفیق، بلوچستان سے آئے مہمان تنویر علوی۔ سوشل ویلفیئر تحصیل آفیسر محمد مبشر، کلینیکل سائیکالوجسٹ ڈاکٹر محمد جمال خان اور انجمن کے مینجر عدنان گوجر نے بھی خطاب کیا. جبکہ دو ریکوریز خرم جاوید اور راجہ افتخار نے بھی سامعین کو اپنے تجربات سے آگاہ کیا۔

بعد ازاں حکیم لطف اللہ نے سماجی شعبہ میں مثالی کارکردگی کا مظاہرہ کرنے والوں میں ایسو سی ایشن کی جانب سے میڈلز اور تعریفی اسناد تقسیم کیں۔ انجمن فلاح نوجواناں کی انتظامیہ کی جانب سے بھی مہمانان کو تحائف پیش کئے گئے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں