201

پاکپتن: نظام مصطفیؐ کے نظام کے بغیر معاشرے کی اصلاح ناممکن ہے. حکیم لطف اللہ

پاکپتن (خرم شہزاد سے) اسلامی قوانین کا نفاذ حکومت کی ذمہ داری ہے، فساد فی الارض کا خاتمہ صرف قانون محمدیؐ سے ہی ممکن ہے، نظام مصطفیؐ کے نظام کے بغیر معاشرے کی اصلاح ناممکن ہے. کسی بھی کام اور اصلاح کیلئے نیت کو ٹھیک کرنا بہت ضروری ہے قرآن مجید کیساتھ ساتھ احادیث مبارکہ اور حضور نبی اکرمؐ کے اسوۃ حسنہ اور سیرت کو بھی ساتھ لے کر چلیں ان خیالات کا اظہار حکیم لطف اللہ سیکرٹری جنرل پاکستان سوشل ایسوسی ایشن نے سیرت النبیﷺ کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا.

سیرت النبیﷺ کانفرنس سے اتحا د بین المسلمین کے ضلعی صدر معروف مذہبی سکالرمفتی زاہد اسدی گورنمنٹ فریدیہ پوسٹ گریجویٹ کالج ڈاکٹر پروفیسر مسعودالشریف جمعیت علماء پاکستان ساہیوال ڈویژن کے صدر راؤ عظمت اللہ خان نے بھی خطاب کیا، مقررین نے کہا کہ دریائے فرات کے کنارے اگر ایک کتا بھی بھوکا رہا تو اسکا جواب بھی اللہ تعالی کی بارگاہ میں حاکم وقت کو دینا ہوگا. نظام مصطفیؐ یہ ہے کہ کسی سردار کی بیٹی چوری میں پکڑی گئی تو حضور نبی اکرمؐ نے فرمایا کہ اگر میری بیٹی فاطمہؓ بھی چوری کرتی تو اس کا بھی ہاتھ کاٹا جاتا، حضرت عمر بن عبدالعزیزؓ کے دور حکومت میں ایک چرواہے کی بکریوں پر ایک بھیڑیے نے حملہ کر دیا تو اس نے کہا کہ لگتا ہے، حضرت عمر بن عبدالعزیزؓ اس دنیا میں نہیں رہے جو اس بھیڑیے نے حملہ کردیا ہے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں