258

ڈینگی بخار اور غذا ۔۔۔۔ (محمد شہزاد منظور، نیوٹریشنسٹ)

تحریر: محمد شہزاد منظور، نیوٹریشنسٹ

ڈینگی بخار ایک خاص قسم کے مچھر سے پھیلنے والا انفیکشن ہے جو فلو جیسی بیماری کا باعث بنتا ہے۔ یہ چار مختلف وائرسز کی وجہ سے ہوتا ہے اور ایڈ یس ایجپٹائی مچھروں کے ذریعہ پھیلتا ہے۔

ڈینگی میں تیز بخار ، سر درد، آنکھوں کے پچھلے حصوں میں شدید درد، جوڑوں کا درد، پٹھوں اور ہڈیوں کا درد ہوتا ھے. ڈینگی مریضوں میں بنیادی طور پر جگر اور ہڈیوں کو نشانہ بنایا جاتا ہے۔ لہذا ڈینگی بخار کے مریضوں کی خوراک کا مقصد بخار، جسمانی کمزوری اور درد کی علامات کو کم کرناہے. لہذاہر طرح کے فضول، تیز مرچ مصالحہ اور تلی ہوئی خوراک سے بچنا ضروری ہے۔ بخار میں مریضوں کی بھوک ختم ہوجاتی ہے لہذا استعمال میں نرم غذا جیسے کھیر، کھچڑی، دلیہ، دال، ساگو دانہ، چاول، سوجی، روٹی اور گریوی دی جاسکتی ہے.

تیز بخار اور الٹی جسم کو ڈی ہائیڈریٹ کرسکتی ہے اس کے لیے مریض کی خوراک میں صاف پانی شامل کریں. معمول کے مطابق، نلکے کے پانی کی بجائے ریہائڈریشن نمکیات والا پانی(ROS)، انار کا رس، سنتگرے کا جوس، ناریل کا پانی، ادرک کا پانی اور تازہ جوس۔ ادرک، الائچی کی چائے، دیگر ہربل چائے اور گرین چائے بھی مریضوں کو دی جاسکتی ہے۔ ڈینگی میں پپیتا یا پپیتے کے پتوں کا جوس بہترین علاج ہے۔ 2 چمچ پپیتے کی پتیوں کے رس اور ساتھ میں آدھا چمچ شہد اور ایک لیموں کا رس اورایک چقندر کا رس شامل کر کے دیا جاسکتا ہے۔ پالک، سرسوں، ساگ، گوبھی اور سبز پتوں والی سبزیاں شامل ہونی چاہئیں۔

چکن، مچھلی، دودھ، انڈا، دہی اور پنیر کا استعمال زیادہ کرنا چاہیے، کیونکہ بخار میں اعلی پروٹین کی غذا بہت اہم ہوتی ہے۔
گرم سوپ کے استعمال سے قوت میں اضافہ ہوگا اور جوڑوں کے درد سے لڑنے میں مدد ملے گی۔ اس سے بھوک بڑھنے اور منہ کے ذائقہ کو بہتر بنانے میں بھی مدد ملے گی۔ چکن سوپ، شوربہ، مکس سوپ دے سکتے ہیں. گاۓ کے دودھ کو بکری کے دودھ کی جگہ لینا بھی پلیٹلیٹس میں اضافہ کرنے میں مفید ہے.

کھانے کی چیزیں جو پلیٹلیٹس کی گنتی کو بڑھاتی ہیں ان میں وٹامن بی 12 سے بھرپور کھانا (انڈا، دودھ، پنیر) فولیٹ (مونگ پھلی، سیاہ بین، لوبیا، اورینج یا سنگترے کا رس)، آئرن (دال، گائے کا گوشت، کدو کے بیج) اور وٹامن سی (انگور، سنگترہ، شملہ مرچ، گوبھی، انناناس، انار، امرود).

کھانے کی چیزیں جو پلیٹلیٹس کی گنتی کو کم کرتی ہیں ان سے پرہیز کرنا چاہئے جیسے کہ کوئینائن، سگریٹ، الکوحولک مشروبات، کرینبیری کا رس اور گائے کا دودھ، مزید غزائی ہدایات کے لئے براہ راست ماہر غزائیات سے مشورہ کرنا مناسب رہتا ہے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں