163

ساہیوال: ایڈیشنل دپٹی کمشنر کی عدالت میدان جنگ بن گئی. وکلاء وسائلین نے یکجا، کمشنر نے فریقین کو طلب کرلیا.

ساہیوال (ملک دلاور سلطان سے) ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر کے رویہ کے خلاف وکلا اور سائلین ایک پیج پر،احمد عثمان جاوید کو عدالت سے باہر نکال دیا گیا۔ عدالت میں تلخ کلامی پر گن مین نے اسلحہ تان لیا۔ کمشنر نے فریقین کو طلب کر لیا۔

ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر ریونیو احمد عثمان جاوید کی عدالت میدان جنگ بن گئی۔ عدالت کے رویہ سے تنگ وکلا اور سائلین یکجا ہو گئے۔ ذرائع کے مطابق اے ڈی سی ریونیو احمد عثمان جاوید عدالت میں مقدمات کی سماعت کر رہے تھے۔ پیپلزپارٹی کے رہنما، امیدوار ایم این اے علی فرید کاٹھیہ ایڈووکیٹ کا کیس زیر سماعت تھا جس میں محمد علی ایڈووکیٹ نے وکالت نامہ جمع کروایا۔ احمد عثمان جاوید یک طرفہ فیصلہ کرنے پر مصر تھے۔ دیگر وکلا کی مداخلت پر بھی وہ باز نہ آئے۔ عدالت کے مبینہ سخت رویہ کے شاکی سائلین بھی وکلا کے ہم آواز ہو گئے۔

ممبر پنجاب بار کونسل و سابق صدور بار مہر قطب الدین طارق اور چوہدری انور سمیت درجنوں وکلا نے احتجاج کرتے ہوئے احمد عثمان جاوید کو عدالت سے باہر نکال کر عدالتی کارروائی رکوا دی۔ احمد عثمان جاوید اپنا دفتر چھوڑ کر رہائش گاہ پر چلے گئے۔ مشتعل وکلا کی بڑی تعداد اور سائلین عدالت کے باہر موجود رہے۔ ریڈر نے سائلین کو آئندہ کی تاریخیں دے کر روانہ کر دیا۔ ذرائع کے مطابق احمد عثمان جاوید اپنے غیر لچکداراور متکبرانہ رویہ کی بنا پر اکثر ناخوشگوار صورتحال سے دوچار رہتے ہیں۔ گذشتہ روز بھی سائلین کو تمام دن انتظار کروانے کے بعد آئندہ کی تاریخیں دے کر روانہ کر دیا گیا تھا جب کہ احمد عثمان جاوید اپنی عدالت اور دفتر چھوڑ کر دیگر افسران کے دفاتر میں بیٹھے رہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں