493

پاکپتن: ظلم کا نظام زیادہ دیر نہیں چل سکتا۔ مریم نواز کا بڑے جلسہ سے خطاب

پاکپتن (حیدر علی شہزاد) ظلم کا نظام زیادہ دیر نہیں چل سکتا ان خیالات کا اظہار نائب صدر مسلم لیگ ن مریم نواز نے رات گئے پاکپتن چوک ارائیاں میں ایک بڑے جلسہ سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ انہوں نے گزشتہ روز سینٹ الیکشن میں ہونے والی صورت حال پر تنقید کرتے ہوئے پس پردہ کرداروں پر کھل کر تنقید کی اور کہا کہ نا جانے کون سی جادوئی چھڑی تھی کہ کھڑے ہونے والے 64 سینیٹرز ڈبوں میں جا کر محض پچاس تک محدود ہو گئے جنرل الیکشن 2018 کی یاد تازہ ہوگئی۔

مریم نواز کا قافلہ 3 بجے پاکپتن کے لیے لاہور جاتی عمرہ روانگہ ہوا ان کے شوہر اور راہنما مسلم لیگ ن کیپٹن ر محمد صفدر ان کی گاڑی چلا رہے تھے۔ راستے میں چھوٹے بڑے شہروں اور قصبات میں جگہ جگہ قافلے کا بھرپور استقبال کیا گیا اور پھولوں کی پتیاں نچھاور کی جاتی رہیں مریم نواز نے متعدد جگہ استقبال کے لیے آنے والوں سے خطاب بھی کیا۔ قافلہ مانگا منڈی، پھول نگر، پتوکی، رینالہ خورد، اوکاڑا، ساہیوال، نور پور اور ملکہ ہانس سے ہوتے پاکپتن پہنچا تو بابافرید چوک فقید المثال استقبال کیا گیا۔ نعروں کی گونج اور پھولوں کی پتیوں کی برسات میں لایا گیا مریم نواز سیدھی دربار حضرت با با فرید پر پہنچیں جہاں دیوان حامد محدود نے ان کو چادر پیش کی انہوں نے دربار با با فرید پر ملکی سلامتی و ترقی اور اپنے والد قائد مسلم لیگ ن نواز شریف کی بریت اور صحت کے لیے دعا کی۔ بعد ازاں وہ چوک ارائیاں جلسہ گاہ کی طرف روانہ ہوئیں۔

جلسہ گاہ پہنچنے پر انکا پرتپاک استقبال کیا گیا۔ جہاں انہوں نے پرجوش خطاب کیا اور اس مطالبہ کو دہرایا کہ بے گناہ نواز شریف کو فی الفور رہا کیا جائے۔ ان کے خطاب کے دوران جلسہ گاہ گو سلیکٹڈ گو اور ووٹ کو عزت دو کے فلگ شگاف نعروں سے گونجتا رہا۔ جلسہ کے اختتام کے بعد وہ واپس لاہور روانہ ہوگئیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں