235

ججوں کیخلاف ریفرنس اور میرا خواب…..(صابر بخاری)

تحریر: صابر بخاری.

برسوں سے میں چیختا چلاتا آیا ہوں کہ پاکستان کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنا ہے تو سب سے پہلے عدلیہ کا نظام ٹھیک کرو۔اسلامی تاریخ پر نظر دوڑائی جائے تو سب سے زیادہ فوکس عدلیہ پر کیا گیا جہاں حضرت علی اور حضرت عمر فاروق جیسی جید شخصیات بھی انصاف کے کٹہرے میں کھڑی ہوئیں۔ دوسری طرف پاکستان کی تباہی و بربادی میں جس قدر گھناونا کردار عدلیہ نے ادا کیا شاید ہی کسی نے ملک دشمنی کا ایسا منافقانہ کھیل کھیلا ہو، پی سی او ججز سے لیکر کال پر فیصلے اور وکیل کی بجائے جج کر لو جیسے شہرت یافہ جملے کسی سے ڈھکے چھپے نہیں، ایسے میں خاک ملک میں انصاف کا بول بالا ہوتا۔ آمر، کرپٹ سیاستدان ججوں کو گھر کی لونڈی سمجھتے رہے اور جج بھی ایسے طاقتوروں کے سامنے بھیگی بلی بنے رہے۔ اس دھندے میں ججوں کے تو وارے نیارے رہے، بینک بیلنس کر پر لگ گئے اور کوئی جج تو قبر میں جاتے جاتے بھی صدر کے عہدے پر فائز رہے، مگر دوسری طرف ملک میں لاقانونیت، اقربا پروری، کرپشن، مافیاز، لوٹ مار کا ایسا کھیل کھیلا گیا کہ اس ایمبریلا کے نیچے غریب اور عام آدمی کی زندگی اجیرن بن گئی اور ملک کی جڑیں کھوکھلی ہوتی رہیں۔ اب جبکہ دو ججوں کیخلاف اثاثہ جات کے حوالے سے ریفرنس دائر ہوا ہے تو وہی مامے چچے بڑ بڑ کر رہے ہیں جن پر بے پناہ ملکی دولت لوٹنے کے الزامات ثابت ہو چکے ہیں۔ اب مجھے قوی امید ہے کہ پاکستان بدل رہا ہے چونکہ میرا یہ یقین تھا کہ جب تک عدلیہ اور ججوں کا احتساب نہیں کیا جاتا اس ملک میں کچھ بھی بدلنے والا نہیں۔ ویلڈن عمران خان احتساب کے حوالے سے آپکے اقدامات لائق تحسین ہیں۔ آپ نے درست کہا تھا کہ جب ان کیخلاف کارروائی ہوگی تو یہ چیخیں گے، چیخنے دو چلانے دو پھڑ پھڑاتے رہیں مگر آپ نے ملک میں احتساب کے حوالے سے جو اقدامات شروع کیے ہیں، لائق تحسین ہیں۔ انشاء اﷲ اب پاکستان بدلنے والا ہے۔ اپوزیشن کے سب چور ملکر بھی احتجاج کریں تو کوئی فرق نہیں پڑنے والا بلکہ مجھے قوی یقین ہے کہ اپوزیشن جس شہر سے بھی گزرے گی گندے انڈوں سے اسکا استقبال کیا جائے گا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں