218

پاکپتن: ہمیں اپنے پیاروں اور آنے والی نسلوں کو بیماریوں سے بچانے کے لئے تمباکو نوشی کے خاتمے کے لئے کوشش کرنی ہو گی. ڈاکٹر شاہد چشتی. ملک ظہور الحق ایڈووکیٹ.

پاکپتن (محمد امین سے) ہمیں اپنے پیاروں اور آنے والی نسلوں کو بیماریوں سے بچانے کے لئے تمباکو نوشی کے خاتمے کے لئے کوشش کرنی ہو گی ان خیالات کا اظہار پرنسپل دی ایجوکیٹرز سکول پاکپتن ملک ظہور الحق ایڈووکیٹ نے انجمن فلاح مریضاں وڈسٹرکٹ اینٹی ٹی بی ایسوسی ایشن کے زیر انتظام نشہ سے پاک پاکستان آگاہی مہم کے سلسلہ میں منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا. حکیم لطف اللہ سیکرٹری جنرل پاکستان سوشل ایسوسی ایشن نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوۓ کہا کہ آج ہمیں تعلیم کے ساتھ ساتھ تربیت کی بھی ضرورت ہے۔اس میں ہماری خواتین اہم کردار ادا کر سکتی ہیں کیونکہ ایک مرد کی تعلیم ایک فرد کی تعلیم اور جبکہ ایک عورت کی تعلیم تین خاندانوں کی تعلیم ہے پہلے اسکے اپنے گھر کی ، دوسرا اسکے سسرال کی اور تیسرا اپنے بچوں کی تعلیم و تربیت۔ نشہ سے متعلق آگاہی دیتے ہوۓ بتایا کہ 13سے 16 قسم کا کینسر تمباکو نوشی کے دھوئیں سے ہوتا ہے شوکت خانم کی جدید تحقیق کے مطابق سالانہ ایک لاکھ ساٹھ ہزار اموات تمباکو نوشی کے دھوئیں سے ہو رہی ہیں۔ ہمیں اپنے پیاروں اور آنے والی نسلوں کو ان بیماریوں سے بچانے کے لئے تمباکو نوشی کے خاتمے کے لئے کوشش کرنی ہو گی اور اس کی تشہیر پر مکمل پابندی عائد کرنا ہوگی. حکومت کی پابندی کے باوجود تشہیر بھرپور جاری ہے جس کو اب ختم کرنا ہو گا۔ صدر انجمن فلاح مریضاں ڈاکٹر شاہد مرتضیٰ چشتی نے اپنے خیالات کے اظہار میں بچوں اور اساتذہ کو بتایا کہ نشہ ایک بری عادت کے علاوہ بہت سی بیماریوں کا سبب بن رہی ہے ہماری آنے والی نسلیں اس دلدل میں دھنستی چلی جا رہی ہے ضرورت اس امر کی ہے ہم اپنے بچوں کو نگہداشت میں رکھیں انہیں برے دوستوں اور بری سوسائٹی سے دور رکھیں تاکہ ہمیں بعد میں پچھتانا نہ پڑے۔ اگر بچے کو اسکے ماں باپ بہن بھائی میں دوست مل جائیں گے تو وہ باہر کبھی دوست نہیں تلاش کرے گا. صدر پریس کلب وقار فرید جگنو نے کہا کہ اگر والدین بچوں کے دوست بن جائیں گے تو پھر بچہ کو کبھی جنسی تشدد جیسے مسائل کا سامنا ہوا بھی تو وو پہلے اپنے گھر میں بتائے گا۔ سیمینار میں آگاہی سیشن کے بعد بچوں نے نشے اور بری سوسائٹی سے متعلق ٹیبلو پیش کیا اور خوب داد وصول کی۔ سیمینار میں حکیم ماجد رضا سمیت سکول کے اساتذہ کرام اور طلبا و طالبات کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں