203

کراچی: گلستان جوہر تھانہ کی حدود میں معصوم بچیوں کے ساتھ زیادتی معمول بن گیا.

کراچی (محمد یوسف سے) گلستان جوہرکے ایس ایچ او کی طرف سے صحافیوں کے ساتھ زیادتی معمول بن گئی. جب صحافی تھانہ کی حدود میں معصوم بچیوں کے ساتھ زیادتی کا نوٹس لینے اور ذمہ داروں کے خلاف کاروائی کرنے کا مطالبہ کرتے ہیں تو موصوف آپے سے باہر ہوجاتے ہیں اور ذمہ داروں کے خلاف کاروائی سے انکار کرتے ہیں. جو لوگ معصوم بچیوں سے زیادتی کرتے ہیں ان سے لین دین کرکے ان کا کیس کمزور کرنے کی کوشش کرتے ہیں، ان بچیوں کا میڈیکل بھی نہیں کروایا جاتا ایس ایچ او کی مدد سے ملزمان کی طرف سے لواحقین کو ان کی بچیوں پر تیزاب پھینکنے کی دھمکیاں دے کر ان کو چپ رہنے پر مجبور کیا جاتا ہے. اہلیان علاقہ نے وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ، آئی جی سندھ ڈاکٹر کلیم امام سے ایس ایچ او اور ملزمان کے خلاف تحقیقات کرکے ان کے جرم کے مطابق کاروائی کی جائے. ایک متاثرہ بچی کی والدہ نے ایس ایس پی غلام اصغر مھیسر سے فوری طور پر ملزمان کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر فی الفور کاروائی نہ کی گئی تو مجبورا کراچی پریس کلب کے سامنے اپنے آپ کو آگ لگا لوں گی.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں