215

پاکپتن: تعلیم یافتہ لوگ اور طلباء وطالبات نشہ کی لت میں کیوں مبتلا ہورہے ہیں اس سوال کا جواب ہمیں اپنے آپ سے اور اپنے ایجوکیشن سسٹم سے مانگنا ہوگا. حکیم لطف اللہ.

پاکپتن (ڈاکٹر محمد امین سے) تمام تر کوششوں اور سائنسی ترقی کے باوجود انسان بالخصوص تعلیم یافتہ لوگ اور طلباء وطالبات نشہ کی لت میں کیوں مبتلا ہورہے ہیں اس سوال کا جواب ہمیں اپنے آپ سے اور اپنے ایجوکیشن سسٹم سے مانگنا ہوگا اور اس کے مطابق حل تجویز کرنے کے بعد ان پر عمل درآمد کرکے اپنی قوم کی اصلاح کرنی ہوگی۔ ان خیالات کا اظہار سیکرٹری جنرل PSAوجنرل سیکرٹری ڈسٹرکٹ اینٹی ٹی بی ایسوسی ایشن حکیم لطف اللہ نے گذشتہ روز ڈاکٹر عبدالقدیر خان گرائمر اسکول میں انجمن فلاح مریضاں، ڈسٹرکٹ اینٹی ٹی بی ایسوسی ایشن رجسٹرڈ محکمہ سوشل ویلفیئر وبیت المال کے زیر انتظام نشہ وجنسی تشدد کے خلاف آگاہی سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر صدر انجمن فلاح مریضاں پاکپتن ڈاکٹر شاہد مرتضیٰ چشتی نے کہا کہ یہ بری عادت ہر 6سیکنڈ بعد ایک قیمتی جان کے ضیاع کا باعث بن رہی ہے۔ اس سے بے شمار بیماریاں پیدا ہوتی ہیں اور انسان کی عزت، وقار اور مستقبل تباہ ہو کررہ جاتا ہے۔ اس بری عادت سے اپنی نوجوان نسل کو دور رکھنے کے لیے ہم ہر حد تک جائیں گے۔ وقار فرید جگنو صدر پریس کلب پاکپتن نے کہا کہ جنسی بے راہ روی سے نوجوانوں کو بچانے اور بچوں کو استحصال سے بچانے کے لیے ان کو اس حوالہ سے ایجوکیٹ کرنے کی ضرورت ہے۔ ہمارا مشرقی معاشرہ ہمیں بچوں سے براہ راست اس موضوع پر بات کرنے سے روکتا ہے لیکن اب وقت آگیا ہے کہ ہم اس دائرہ سے باہر نکل کر اپنی نسل کو آگاہی دیں بصورت دیگر ہم روزانہ کی بنیادپر، زینب، فرشتہ جیسی کلیوں کے مسخ شدہ لاشے اپنے کندھوں پر اٹھانے کے لیے تیار رہیں۔اس موقع پر میاں عبدالرحمن وٹو بانی تحریک اینٹی کرپشن، سیکرٹری نشرواشاعت پریس کلب حیدر علی شہزاد اور حکیم ماجد رضا نے بھی خطاب کیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں