218

پاکپتن: نشہ ہماری جڑوں کو کھوکھلا کئے جارہا ہے ہم کیسے خاموش تماشائی بنے رہیں. شاہد اکرام

پاکپتن (اظہر حسین سے) نشہ ہماری جڑوں کو کھوکھلا کئے جارہا ہے ہم کیسے خاموش تماشائی بنے رہیں ان خیالات کا اظہارشاہد اکرام پرنسپل پاک بوائز ہائی اسکول،فرید نگر۔ پاکپتن نے اسکول میں انجمن فلاح مریضاں، ڈسٹرکٹ اینٹی ٹی بی ایسوسی ایشن وپاکستان سوشل ایسوسی ایشن کے اشتراک سے نشہ وجنسی تشدد کے خلاف آگاہی سیمینارسے خطاب کرتے ہوئے کیا۔ اس موقع پر حکیم لطف اللہ سیکرٹری جنرل پاکستان سوشل ایسوسی ایشن نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ آج ضرورت اس امر کی ہے کہ ہمارا استاد اور طالب علم خود سماجی سطح پر میدان میں آگے آئیں اورقیادت کرتے ہوئے نوجوان نسل اور معاشرے کو نشہ جیسی لعنت سے پاک کرنے کا عزم کریں استاد، والدین، سیاستدان، سماجی تنظیمیں اور حکومتی ادارے اگر ایک پیچ پر آجائیں تو کوئی وجہ نہیں کہ ہم اس عفرت سے جان چھڑانہ پائیں۔ڈ اکٹر شاہد مرتضیٰ چشتی صدر انجمن فلاح مریضان نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ نشہ کی بنیاد تمباکو نوشی ہے۔ ہمیں سب سے پہلے اس سیڑھی کو ختم کرنے کی ضرورت ہے۔تمباکو نوشی کرنے والاانسان13سے 16قسم کا کینسر۔ امراض قلب۔ہائی بلڈ پریشر۔شوگر۔اندھا پن اوربے شمار بیماریوں میں مبتلا ہورہا ہے۔وقار فرید جگنو صدر پریس کلب و جنرل سیکرٹری انجمن فلاح مریضان نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ پاکستان میں کم و بیش 76 سے 80لاکھ لوگ منشیات کا استعمال کرتے ہیں۔تمباکو نوشی کی تشہیر پر قانونی پابندی ہے لیکن عمل درآمد موثر طور نہیں ہوپارہا۔ منشیات سے آگاہی کے حوالہ سے بھی میڈیا، سماجی تنظیمیں اپنے فرائض سے غافل نہیں لیکن مذید پر اثر مہم چلانے کی ضرورت ہے۔ بچوں کے راہ راست سے بھٹک جانے کی بنیادی وجوہات والدین کا بچوں کو ان کا جائز پیارنہ دینا اورانکی بنیادی ضروریات کو پورا نہ کرنا ہے والدین کو چاہئے کہ وہ اپنے بچوں کی کفالت اورنگہداشت خود کریں تو اس مسئلہ کو روکا جاسکتا ہے۔وہ قومیں کبھی زوال کا شکار نہیں ہو سکتی جس ملک کے تعلیمی ادارے صحیح معنوں میں تعلیم وتربیت دے رہے ہوں۔سیمینار میں حکیم ماجد رضا اورطلباء واساتذہ کرام کی کثیر تعداد نے شرکت کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں