193

پاکپتن: “بلیک کوارٹر” حیوانی وائرس تیزی سے گاٸے کو نگلنے لگ گٸی، چند دنوں میں درجنوں گائیں ہلاک.

پاک پتن (محمد امین سے) “بلیک کوارٹر” حیوانی وائرس تیزی سے گاٸے کو نگلنے لگ گٸی چند روز میں محکمہ لاٸیو سٹاک کے اسٹنٹ ڈائریکٹر ڈاکٹر خالد رشید کی دو گائیں سمیت متعدد زمینداروں کی لاکھوں مالیت کی درجنوں گاٸے موت کے منہ میں جاپہنچیں اور مذید گایوں کے متاثر ہونے کی اطلاعات بھی موصول ہورہی ہیں اس ضمن میں رابطہ کرنے پر محکمہ لاٸیو سٹاک کے ڈپٹی ڈایریکٹر ڈاکٹر اشفاق کا کہنا ہے کہ ملکہ ہانس میں ہلاک ہونے والے مویشیوں میں سے دو بلیک کوارٹر وائرس کا شکار ہوئے. باقی میں دیگر وائرس پاہے گٸے جب کہ 106 ڈی میں بلیک کوارٹر وائرس سے ایک ہفتے میں پانچ گاٸیں ہلاک ہوگٸیں جن میں دو اپنے ہی محکمہ کے ضلعی آفیسر کی تھیں ڈاکٹر خالد رشید کا کہنا ہے کہ پاک پتن میں دو لاکھ سے زاٸد گائیں موجود ہیں جن کو ڈھڑھ ماہ قبل بلیک کوارٹر وائرس کی ویکسین کی گٸی تھی اس وقت ایف اینڈ ای غیر ملکی تنظیم کے تعاون سے پاک پتن میں آٹھ لاکھ ستر ہزار جانوروں کو بیس کروڑ روپے مالیت کی ویکسین کی جاری ہے ابھی بلیک کوارٹر وائرس کی ویکسین نہیں ہورہی. یہ ویکسین وہ خود نہیں خریدتے بلکہ حکومت پنجاب ان کو فراہم کرتی ہے. ان کا کہنا تھا کہ پاک پتن میں بلیک کوارٹر وائرس سے ہلاک ہونے والے مویشیوں اور پھیلنے والی وائرس کے متعلق ان کے محکمہ کے ڈایریکٹر جنرل ریسرچ بھی اپنی تحقیقات کرکے رپورٹ مرتب کر چکے ہیں ۔ تشویش ناک امر یہ ہے کہ اگر ڈھڑھ ماہ قبل دولاکھ گائے کو بلیک کوارٹر ویکسین دی گٸی ہے تو پھر پاک پتن میں اتنی تیزی سے اس وائرس نے کیسے پھیل کر لاکھوں مالیت کی گاٸے موت کے گھاٹ اتار دیں اور یہ خطرناک وائرس مذید صحت مند جانوروں کو بھی اپنی لپیٹ میں لے رہا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں