193

راولپنڈی: سپریم کورٹ نے فیملی عدالتوں کیلیے 10 رہنما اصول طے کردیے.

راولپنڈی(راجہ ساجد سے) سپریم کورٹ نے والدین میں ناچاقی کی صورت میں بچوں کی بہترین پرورش، تعلیم اور مادر پدر شفقت برقرار رکھنے کے لیے فیملی عدالتوں کے لیے 10 رہنما اصول طے کر دیے، فیصلہ جسٹس مشیر عالم کی سربراہی میں جسٹس فیصل عرب اور جسٹس سجاد علی شاہ پر مشتمل فل بینچ نے کیا۔ جس کا پہلا نکتہ یہ ہے کہ بچے بالغ ہونے تک ماں کے پاس رہیں گے، دوم ان کی تعلیم، یونیفارم، کتب، اسکول کے لیے پک اینڈ ڈراپ اخراجات والد کے ذمے ہوں گے، والد ہر ماہ تعلیمی اخراجات کے علاوہ متفرق ضروریات کے لیے 5 ہزار روپے الگ دے گا، ہر چھٹی کے دن بچے والد کے پاس اس کے گھر جاسکیں گے، والد بچوں کو ان کی ماں کے گھر سے جمعہ کی رات 8 بجے لے گا اور اتوار دن ایک بجے واپس ڈراپ کرے گا، موسم گرما کی چھٹیاں شروع ہونے کے پہلے اتوار والد بچوں کو لے سکے گا، چار اتوار بچے والد کے گھر رہیں گے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں