329

استحکام پاکستان اور قومی زبان …. شمائلہ چوہدری

تحریر شمائلہ چوہدری

(بشکریہ: تحریک نفاذ اردو)

یوم پاکستان جو کہ پاکستان کی تاریخ کا بہت اہم دن ہے۔ اس دن یعنی 23 مارچ 1940 کو قرارداد پاکستان پیش کی گئی تھی۔ جی قرارداد پاکستان وہی ہے جس کی بنیاد پر مسلم لیگ نےبرصغیر میں مسلمانوں کے جدا گانہ وطن کے حصول کے لیے تحریک شروع کی تھی اور سات برس کے بعد اپنا مطالبہ منظور کرانے میں کامیاب ہو گئی تھی یہ تاریخی موقع تھا اور تاریخی جلسہ بھی. یہی وہ مطالبہ تھا جواسلامی جمہوریہ پاکستان کے نام سے دنیا کے نقشے پر ابھراہے. 23 مارچ جب قرارداد پاکستان پیش ہوئی اس سے پہلے بھی الگ ریاست کا ذکر ہوتا رہا تھا لیکن قرارداد پاکستان ٹرننگ پوائنٹ تھا جب تمام مسلمانوں نے یک زبان ہوکر الگ مسلمان ریاست کا نہ صرف مطالبہ کیا بلکہ اقبال اور قائد اعظم محمد علی جناح کی سر کردگی میں تحریک کو پروان چڑھانے کی کوششیں تیز کر دیں گیں. بالآخر طویل جدوجہد کے بعد پاکستان وجود میں آیا. یہ اقبال کے خواب کی تعبیر ہے جو انہوں نے مسلم اکثریتی علاقوں کے متعلق دیکھا تھا الگ ایسی ریاست جہاں مسلمان اپنی مرضی سے زندگی گزار سکیں یہی دن تھا دراصل جب دو قومی نظریہ کو مضبوط آواز ملی اور مقرر پلیٹ فارم پر بھی میسر ہوا جس کے تحت تحریک آزادی پروان چلی اور آج ہم آزاد ملک میں سکھ کا سانس لے رہے ہیں. پاکستان ایک مضبوط ملک ہے خطے میں اپنا اہم مقام رکھتا ہے بلکہ یوں کہیے کہ خطے میں استحکام کی علامت پاکستان ہے تو غلط نہ ہوگا. پاکستان مشرق وسطیٰ کے وسط میں واقع ہے پاکستان کے مشرق میں دنیا کی بڑی جمہوریت کہلانے والا ملک بھارت ہے جس سے تعلقات اتر چڑھاؤ کا شکار رہتے ہیں مغرب کی طرف دیکھیں تو بردار اسلامی ملک افغانستان اور ایران ہیں تعلقات سطح پر پاکستان ہمیشہ نیک خواہشات کا اظہار کرتا رہا ہے جبکہ شمال میں قریبی دوست چین ہے جنوب میں بحیرہ عرب ہے جغرافیائی اعتبار سے پاکستان بہترین مقام رکھتا یہ بات ہر کوئی جانتا ہے. پاکستان خارجہ پالیسی میں ہمیشہ ہی پر امن نظریے پر کار بند رہا ہے اور حالیہ دنوں میں بھی ایسے فیصلے کیے ہیں جن پر امن کی سفیدی عیاں ہے چاہیے پاک بھارت تعلقات کی خراب صورتحال ہو یا افغان امریکہ مزاکرات میں تعاون پاکستان استحکام کی علامت رہا ہے.

پاکستان نہ صرف مضبوط ست رنگیہ ثقافتی ورثہ رکھتا ہے بلکہ مضبوط دفاعی نظام بھی موجود ہے پاکستان کے اندرونی استحکام کے لئے فورسز پر عزم ہیں 22 کڑور آبادی والا ملک دنیا کی ساتویں بہترین فورسز رکھتا ہے. پاکستان کو اندرونی اور بیرونی مداخلت سے بچانے کے لیے سول، فوجی اور نیم فوجی دستے سر گرم رہتے ہیں ان کے علاوہ پولیس، رینجرز اور دیگر ادارے بھی فرائض کی انجام دہی میں سر فہرست ہیں. پاکستان ایٹمی ملک ہے اور پاکستان کے ایٹمی طاقت بننے کے بعد دیگر بہت ساری چھوٹی ریاستوں نے سکون کا سانس لیا ہے. اس میں کوئی شک نہیں کہ پاکستان کی سالمیت کو اگر بیرونی یا اندرونی طور پر دفاعی لحاظ سے خطرے کا سامنا ہو تو مقابلہ ممکن ہے اور سر بلندی کے انتظامات بھی موجود ہیں. ایک اہم معاملہ ہے جو پاکستان کو نقصان پہنچانے کے در پر ہے وہ ہے قومی زبان کا معاملہ ہے.

پاکستان میں مختلف ثقافتیں مختلف علاقے اور مختلف زبانوں کا الگ ورثہ موجود ہے تاہم آئین میں سرکاری زبان اردو کو قرار دیا گیا ہے اور یہ اردو زبان ہی ہے جس سے یکجہتی کی خوشبو آتی ہے. اردو زبان پورے ملک اور ملحقہ ریاست کشمیر میں بولی سمجھی جاتی ہے لیکن بدقسمتی سے اسے وہ مقام نہیں مل رہا جو اس کا حق ہے. ہمارا لسانی نظام تفرقوں میں تقسیم ہے. مادری زبان وہ ہوتی ہے جو ماں کی گود میں سیکھی جاتی ہے پہلے علاقائی زبانیں مادری زبان کا درجہ رکھتی تھیں لیکن اب حالات نے کایا پلٹی ہے اب اردو ہی مادری زبان کا درجہ لینے لگی ہے ہم میں سے جاننے کتنے لوگ ایسے ہیں جنہوں نے مکمل اردو کی گود میں پرورش پائی اس لیے یہ لوگ علاقائی زبانوں کے بجائے اردو میں اصل بات کہہ سکتے ہیں. کیونکہ کسی زبان کا خمیر ہی احساس کی شدت تک پرکھ سکنے میں معاون ہے. معاملہ یہاں اردو تک ختم نہیں ہے بلکہ اب کچھ لوگوں کی مادری زبان جس میں ماں جی یا مما اپنے بچے سے بات کرتی ہیں وہ انگریزی یا انگریزی اردو یعنی مکس ورجن زبان جیسے اردو زبان میں گلابی اردو کہا جاتا ہے عام ہوگی ہے. یہاں ایک اہم معاملہ یہ بھی ہے یہ مکس ورجن یا انگریزی کے ماہرین بچے زبان تو خوشگوار بول لیتے ہیں لیکن احساس کی گہرائیوں تک رسائی ناممکن رہتی ہے اس کی وجہ میرے نزدیک ماحول ہے کسی زبان کو ترقی کے لئے اسی کے مطابق سازگار ماحول کی بھی ضرورت ہوتی تاکہ پھل پھول سکے. اگر صحرا کا کانٹے دار پودا کشمیر کے کسی پہاڑ کی ذخیر زمین میں پیوست کر دیا جائے تو اس کی مناسب بڑھوتری نہیں ہوگی شاید زندہ رہے لیکن توجہ کا مرکز نہیں رہے گا. انگریزی عالمی رابطہ کی زبان ہے اس کے سیکھنے سمجھنے بولنے سے ہر گز انکار نہیں لیکن استحکام پاکستان کے فروغ کے لئے صحیح معنی میں اردو زبان کا نفاذ ضروری ہے. انگریزی بطور عالمی رابطہ کی زبان پڑھائی جائے. لیکن اردو کو انگریزی میں پڑھانے کی کوشش نہ کی جائے مطلب یہ کہ معلومات مقامی ورثہ اور کاروباری، عدالتی، ملکی نظام اردو میں چلنا چاہیے. قومی زبان ترقی میں معاون ہے یہ بات عالمی طور پر تسلیم شدہ مسلمہ حقیقت ہے چین امریکہ جاپان اس کی روشن مثال ہیں. اردو کو قبولیت عام حاصل ہے کیونکہ ہر زبان جو جس ملک یا علاقے کی پیداوار ہوتی ہے اپنے بولنے والے کے لہجے، استعارے، اور اندازے بیان میں بھی معنی لے ہوتی ہے. قومی زبان میں بات زیادہ بہتر طور پر سمجھ آتی یوں کہا جا سکتا ہے درجہ دوم کی زبان میں پیغام آپ تک پہنچ جاتا ہے لیکن مادری زبان یا قومی زبان میں احساس اپنی پوری شدت کے ساتھ آپ تک پہنچتا ہے. اس کی حالیہ مثال صدر مملکت عارف علوی کی ملاحظہ کیجئے چند دن پہلے کسی تقریب میں صدر صاحب اور ان سے پہلے ایک عرب معتبر شخصیت کا خطاب سننے کا اتفاق ہوا. عربی زبان میں خطاب ہوا سب اپنی باتوں میں مشغول نظر آئے ماسوائے چند ایک کے کسی نے توجہ نہ دی. عارف علوی صاحب نے خطاب انگریزی میں شروع کیا تب بھی صورتحال کچھ زیادہ اچھی نہیں تھی لیکن جوں ہی صدر صاحب اردو میں مخاطب ہوئے ہال کئی بار تالیوں سے گونجا ہر فرد ایسے توجہ دے ہوئے تھا جیسے صدر صاحب صرف اسی سے مخاطب ہیں. زبان کی شائستگی رویہ لہجہ تاثیر رکھتا ہے ایسے میں پاکستان کی قومی زبان اردو ہی ہے جو استحکام پاکستان کا وسیلہ بن سکتی ہے سماجی رابطے اور اتحاد کی علامت کہی جا سکتی ہے-

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں