226

اسلام آباد: زیرالتواء مقدمات کی قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے، چیف جسٹس

اسلام آباد (نمائندہ خصوصی) چیف جسٹس پاکستان آصف سعید کھوسہ نے کہا ہے کہ زیرالتواء مقدمات کی قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے۔ چیف جسٹس آصف سعید کھوسہ نے ایک دیوانی مقدمے کی سماعت کے دوران اہم ریمارکس دیے کہ عدالتوں کو زیرالتواء مقدمات کا طعنہ دیا جاتا ہے، لیکن اس کی قصور وار عدالتیں نہیں کوئی اور ہے، ججز کی 25 فیصد خالی آسامیاں پُر کر دی جائیں تو دو سال میں زیر التواء مقدمات ختم ہوجائیں گے۔ چیف جسٹس نے کہا کہ ہمارے ججز زیر التواء مقدمات نمٹانے کی بھرپور کوشش کر رہے ہیں، ایک سال میں 31 لاکھ مقدمات نمٹائے گئے ہیں جن میں سے صرف سپریم کورٹ نے 26 ہزار مقدمات نمٹائے ہیں، اس کے مقابلے میں امریکا کی سپریم کورٹ نے ایک سال میں 80 سے 90 مقدمات نمٹائے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں