271

ساہیوال: 83 سالہ بسمل صابری کی خدمات کا اعتراف، مجید امجد ادبی ایوارڈ دے دیا گیا.

ساہیوال(خصوصی رپورٹ) ساہیوال آرٹس کونسل کے زیر اہتمام ’’مجید امجد ادبی ایوارڈ‘‘ کا اجراء کر دیا گیا ۔پہلا مجید امجد ادبی ایوارڈ عالمی شہرت یافتہ معروف شاعرہ بسمل صابری کو دیا گیا۔ ادباء اور شعراء کی ادبی خدمات کو ان کی زندگی میں ہی سراہنا اس ایوارڈ کا مقصد ہے۔تراسی سالہ بسمل صابری کی ادبی خدمات کا اعتراف کرتے ہوئے ڈائریکٹرساہیوال آرٹس کونسل ڈاکٹر ریاض ہمدانی نے کہا کہ ادبی مشاہیر ہمارے معاشرے کا خوبصورت عکس ہیں جو فکری اعتبار سے معاشرے کو صحت منداور موثر بناتے ہیں۔انہی فکری حلقوں کی بدولت معاشرہ نکھر کراپنا مقام و مرتبہ خود متعین کرتا ہے۔

بسمل صابری نے نہ صرف ساہیوال بلکہ پاکستان کا نام بین الاقوامی سطح پر اجاگر کرنے میں اہم کردار کیا۔وہ چھ کتابوں پانی کا گھر، روشنیوں کے رنگ،یادوں کی بارشیں،رس کی پھوہاراور بیاض نظر کی مصنفہ ہیں۔’’اردو شاعری کی سکائی لارک‘‘ زیر طبع ہے۔شہر کی اہم سماجی شخصیات مسز شادمسعود، مسعود چوہدری،ضیاء الرحمٰن خان ،شیخ شاہد حمید،انوار الحق رامے،ڈاکٹر سہیل قریشی،بیگم ارجمند قریشی،میاں مسعود، خواجہ مظفر حسن اورشہید پوسوال نے شرکت کی۔اظہار خیال کرنے والوں میں جی سی یونیورسٹی لاہور سے ڈاکٹر سعادت سعید،ساہیوال سے پروفیسر محمد اکبرشاہ،پروفیسر شبیر مغل،پروفیسر ریاض حسین زیدی ،پروفیسر اورنگ زیب،پروفیسر ارجمند قریشی شامل ہیں۔معروف شعراء میں سے میجر اعظم کمال ،اوصاف شیخ ، مرتضیٰ ساجداور ڈاکٹر رانی آکاش نے بھی اس تقریب میں شرکت کی ۔اس موقع پر بسمل صابری نے تحت اللفظ اور ترنم سے اپنا کلام سنا کر حاضرین سے خوب داد وصول کی۔ساہیوال آرٹس کونسل کی ’’مجید امجدادبی ایوارڈ ‘‘ کے اجرا کی اس روایت کو ادبی و سماجی حلقوں نے خوب سراہااور بسمل صابری کو مبارکباد پیش کی۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں