332

پاکپتن: ہماری تھوڑی سی توجہ مریض کی زندگی بچا سکتی ہے۔ ورلڈ ٹی بی ڈے کے حوالے سے DHDC کانفرنس روم میں سیمینارسے ای ڈی او ہیلتھ، آسسٹنٹ کمشنر، ڈاکٹر غلام عباس، حکیم لطف اللہ، ڈاکٹر شاہد مرتضی چشتی ودیگرکا خطاب.

پاکپتن (ولی محمد شاکر سے) ورلڈ ٹی بی ڈے کے موقع پر انجمن فلاح مریضاں، پاکستان سوشل ایسوسی ایشن، ڈسٹرکٹ انٹی ٹی بی ایسوسی ایشن، ہیلتھ ایجوکیشن اینڈ انوائرمنٹل پروٹیکشن سوسائٹی اور محکمہ سوشل ویلفئیر کے زیر اہتمام DHDC ہال پاکپتن سیمینار کا انعقاد کیا گیا. سیمینار میں ڈاکٹر رانا امتیاز احمد CEO ہیلتھ نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوۓ کہا ٹی بی ایک خطرناک مرض ہے جو ایک انسان سے دوسرے تک بہت آسانی سے پھیل جاتی ہے ہماری تھوڑی سی توجہ مریض کی زندگی بچا سکتی ہے۔ اس مرض کے خاتمے کے لئے ہم سب کو اپنا کردار ادا کرنے کی ضرورت ہے۔ علی عاطف اسسٹنٹ کمشنر نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوۓ کہا کہ ہمیں صفائی ستھرائی کا خاص خیال رکھنا چاہیے۔ تمباکو نوشی اور اس کے دھوئیں میں بیٹھنے، ناقص غذا، قوت مدافعت میں کمی، دھوئیں میں کام کرنے سے، پھیپڑوں کی کمزوری اور ٹی بی کے مریض سے بھی ٹی بی کے مرض میں مبتلا ہونے کا باعث بنتی ہیں۔ ڈاکٹر شاہد مرتضیٰ چشتی جنرل سیکرٹری انجمن فلاح مریضان نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ اب تو ٹی بی کا علاج بہت آسان ہے پہلے نو ماہ علاج کا دورانیہ تھا جو کے کم ہو کر 6 ماہ رہ گیا ہے۔ مریض کو چاہیے کہ وہ بجائے ٹوٹکے کرنے کے یا علاج سے بھاگنے کی بجائے سنجیدگی سے اپنا علاج کروائے کیوں کہ وہ اپنا نقصان تو کرتا ہی ہے لیکن اپنے قریبی لوگوں کو بھی اس موزی مرض میں مبتلا کرنے کا باعث بنتا ہے۔ اس موقع پر حکیم لطف اللہ سیکرٹری جنرل پاکستان سوشل ایسوسی ایشن نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ جس کسی نے ایک انسان کی زندگی بچائی گویا اس نے پوری انسانیت کی زندگی بچا لی۔ ٹی بی ایک مہلک لیکن قابل علاج مرض ہے۔ جدید تحقیق سی پتا چلا ہے کہ روزانہ 450افراد ٹی بی کا شکار ہو رہے ہیں ہم سب مل جل کر اس مسلے کا حل نکالیں اس کے لئے ضروری ہے تمام سماجی تنظیمیں سوشل وورکر آوایرنس پروگرامز کا اہتمام کریں۔ ڈاکٹر غلام عبّاس خان ٹی بی کلینک انچارج نے اپنے خیالات کے اظہار میں کہا کہ ٹی بی کا مکمل علاج مفت ہے مریض کو اسکی ادویات گھر تک پہنچائی جاتی ہیں۔ ٹی بی کے تمام ٹیسٹ جن میں خون کے ساتھ ساتھ بلغم ، مائیکرو. جین ایکسپرٹ بھی مفت کئے جاتے ہیں۔ ایسے لوگ جن کو دو ہفتے سے زائد کھانسی یا اس میں خون، وزن کم ہونا ، بھوک کی کمی یا ہلکا بخار ہو تو فوری ٹی بی کے ٹیسٹ کرائیں۔ وقار فرید جگنو صدر انجمن فلاح مریضان نے اپنے خیالات کااظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ ہماری اخلاقی ذمہ داری بنتی ہے کہ ہم اپنے اردگرد ایسا ککوئی بھی مشکوک شخص دیکھیں جس میں ٹی بی کی علامات ظاہر ہو رہی ہوں تو اسے فوری طور پر ٹی بی کلینک لے کر جائیں ہو سکتا ہے آپ کے اس قدم سے اسکی زندگی بچ جائے کیوں کہ حقوق اللہ‎ کی معافی ہو سکتی ہے لیکن حقوق العباد کی نہیں۔سیمینار میں حکیم عبدالمجید شامی صدر پاکستان طبّی کانفرنس، غلام نبی ڈھڈی جنرل سیکرٹری سوشل ڈویلپمنٹ کونسل، ہومیو ڈاکٹر محمود ریاض جوئیہ،ہومیو ڈاکٹر محمد علی، حکیم نذیر قادری، حکیم خرم شہزاد، حکیم غلام مصطفیٰ ساجد، حکیم محمد حنیف اور ڈاکٹرز، نرسز، سٹیک ہولڈر، سماجی تنظیموں کے ممبران اور شہریوں کی کثیر تعداد نے شرکت کی سیمینار کے اختتام پر واک کا اہتمام بھی کیا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں