355

درد کو کیا خوب موقع ملا ہے…..چاند ، حیدرآباد.

تحریر: چاند ، حیدر آباد.

درد کو کیا خوب موقع ملا ہے
رگوں میں رقص کر رہا ہے
خون کو ایک جگہ جما کے
تمام تر شدتوں،غموں،
دکھوں،بدگمانیوں کو
ساتھ لئے پھر رہا ہے
درد کو کیا خوب موقع ملا ہے
آج دل کھول کے
رگوں میں رقص کر رہا ہے
ایسا رقص کہ جس نے خوشی
کے ہر احساس کو منجمد کردیا ہے
ایسا رقص کہ جس کے بعد
کوئی اور آواز سنائی نہیں دے رہی
کوئی احساس محسوس نہیں ہو رہا
بس درد کو موقع ملا ہے آج
رگوں میں رقص کرنے کا
اور۔۔۔۔۔۔
درد رگوں میں رقص کر رہا ہے

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں