304

ساہیوال: مصنوعی دودھ کا دھندہ عروج پر، شہری بیماریوں کا شکار ہونے لگے، فوڈ اتھارٹی نوٹس لے.

ساہیوال(خصوصی رپورٹ) ساہیوال شہر سمیت گلی ، محلوں ، چوکوں اور چوراہوں پر مصنوعی دودھ کی فروخت کا دھندہ عروج پر پہنچ گیا۔مر د، خواتین،بوڑھے،بچے نوجوان مضردودھ استعمال کرنے سے مہلک بیماریوں کا شکار ہونے لگے۔ مقامی انتظامیہ فوڈ اتھارٹی نے دودھ مافیہ کے خلاف کارروائی کو یقینی نہ بنایا تو سینکڑوں شہری گردوں کے خطر ناک مرض میں مبتلا ہو سکتے ہیں ۔شہریوں نے کہا کہ انتہائی دکھ اور افسوس کیساتھ کہنا پڑتا ہے کہ جگہ جگہ کیمیکل سے تیار شدہ دودھ فروخت کیا جا رہا ہے ۔ جس کی روک تھام کیلئے کسی بھی قسم کے کوئی اقدامات نہیں کیے جارہے ۔ جس کے پیش نظر عوام اور شہری مضر دودھ پینے اور استعمال کرنے سے گردوں اور پھپھڑو ں کے مرض میں مبتلا ہو کر ہسپتالوں میں زندگی اور موت کی جنگ لڑ رہے ہیں ۔ واضح رہے کہ مصنوعی دودھ میں سنگھیڑاکا پاؤڈر ، یوریا کھاد اور ناقص سرف کے علاوہ چند ایسے کیمیکل کا استعمال کیا جاتا ہے جسکی گندی بدبو کو ختم کرنے کیلئے دودھ فروش مافیہ اسے فریج میں رکھ دیتے ہیں ۔ عوام او ر شہریوں کا کہنا ہے کہ فوری طور پر ملاوٹ مافیہ اور دودھ فروش مافیہ کے خلاف فوری کارروائی عمل میں لائی جائے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں