627

پاکپتن: کچہری میں فائرنگ سے تین افراد کی ہلاکت کیس میں ٹریفک پولیس اہلکار سمیت ایک ملزم کو گرفتار کرلیا.

پاکپتن(بیورو رپورٹ) کچہری میں فائرنگ سے تین افراد کی ہلاکت کا واقعہ، پولیس نے ٹریفک پولیس اہلکار سمیت دیگر ملزمان کو ٹریس کر کے ایک ملزم کو گرفتار کر لیا،ڈی پی او ماریہ محمود نے ملزم کی گرفتاری کے بارے آئی جی پنجاب کو رپوٹ ارسال کردی۔تفصیلات کے مطابق ضلع کچہری میں وکیل کے چیمبر میں فائرنگ سے قتل سمیت سنگین مقدمات میں عبوری ضمانت لینے والے دو بھائیوں سمیت تین افراد کی ہلاکت کے واقعہ کی سی سی ٹی فوٹیج میڈیا نے حاصل کر لی جس میں ملزمان کو فرار ہوتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔پولیس ذرائع کے مطابق فائرنگ کے واقعہ میں پانچ افراد ملوث تھے۔پولیس ذرائع نے یہ بھی انکشاف کیا کہ فائرنگ کرنے والے ملزمان میں ٹریفک پولیس کا ایک اہلکار شامل ہے جس کی شناخت طالب حسین کے نام سے ہوئی۔ پولیس نے سی سی ٹی وی فوٹیج اور دیگر شواہد کی مدد سے فائرنگ کرنیوالے ملزمان کو ٹریس کر لیا۔پولیس نے ٹریس ہونیوالے ملزمان میں سے صابر نامی ملزم کو گرفتار کر لیا۔واقعہ میں ملوث دیگر ملزمان کی شناخت غلام مصطفی،محمد احمد،امداد اور طالب حسین کے ناموں سے ہوئی ہے۔پولیس ذرائع کا کہنا ہے طالب حسین نامی ملزم ٹریفک پولیس پاکپتن کا کا نام منظر عام پر آنے کے بعد اہلکار بھی شہر سے غائب ہے۔پولیس ذرائع کے مطابق دیگر ملزمان کی گرفتاری کیلیے پولیس دریائے ستلج کی بیلٹ میں آپریشن کررہی واقعہ کو ایک روز گزرنے کے بعد بھی بار میں فضاء سوگوار ہے اور وکلاء کی ہڑتال جاری ہے،ڈی پی او ماریہ محمود نے ملزم کی گرفتاری کے بارے آئی جی پنجاب کو رپوٹ ارسال کردی،ڈی پی او ماریہ محمود نے رپورٹ میں بتایا کہ گرفتار ملزم صابر سے ملنے والی معلومات سے دیگرملزمان کو بہت جلد گرفتار کرلیں گے،پولیس کی ٹیم انسپکٹر اجمل کی سربراہی میں دریائے ستلج کی بیلٹ میں آپریشن کر رہی ہے۔وقوعہ میں ملوث ٹریفک پولیس اہلکار طالب کو معطل کردیا گیا ہے،زرائع کے مطابق مقتول ملزمان نے طالب حسین ٹریفک اہلکار کے بھائی کو اغواء کرکے اس کے کان ناک ہاتھ سمیت جسم کے اعضاء کاٹ دیئے تھے۔
سابقہ خبر پڑھنے کے لیے یہاں کلک کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

پاکپتن: کچہری میں فائرنگ سے تین افراد کی ہلاکت کیس میں ٹریفک پولیس اہلکار سمیت ایک ملزم کو گرفتار کرلیا.” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں