311

ساہیوال: معصوم بچوں کے سامنے پولیس نے والدین کو گولیوں سے بھون ڈالا، 2 خواتین سمیت 4 افراد جاں بحق، 3 بچے زخمی، ہلاکت کی خبرسن کر دادی چل بسی۔

ساہیوال(خصوصی رپورٹ) معصوم بچوں کے سامنے پولیس نے بے دردی سے والدین کو گولیوں سے بھون ڈالا،پولیس کی فائرنگ سے 2 خواتین سمیت 4 افراد جاں بحق، 3 بچے زخمی،خاندان کی ہلاکت کی خبرسن کر دادی چل بسی۔چونگی امرسدھولاہورکی رہائشی فیملی شادی کی تقریب میں شرکت کیلئے بوریوالاجاتے ہوئے قانون نافذکرنیوالے ادارے کی گولیوں کا نشانہ بن کر جان سے ہاتھ دھوبیٹھی،سی ٹی ڈی کی فائرنگ سے معصوم بچے بھی محفوظ نہ رہے ،آٹھ سالہ مبینہ ،بارہ سالہ عمیر گولیاں لگنے سے زخمی،قادرآباد کے قریب پولیس کے محکمہ انسداد دہشت گردی (سی ٹی ڈی) کی فائرنگ سے 2 خواتین سمیت 4 افراد ہلاک اور 3 بچے زخمی ہوگئے۔خبررساں اداروں کے مطابق ساہیوال میں سی ٹی ڈی کی کارروائی میں ایک ہی خاندان کے 4 افراد جاں بحق اور 2 بچے زخمی ہوگئے۔ جاں بحق افراد میں ماں ،بیٹی اوروالدشامل ہیں۔سی ٹی ڈی نے چاروں جاں بحق افراد کو اغوا کار قرار دیتے ہوئے دعویٰ کیا کہ پولیس نے لاہورسے آنے والی ایک آلٹو گاڑی کو رکنے کا اشارہ کیا تو کار سوار افراد نے فائرنگ کردی۔ پولیس کی جوابی فائرنگ سے چاروں افراد ہلاک ہوگئے تاہم حیران کن طور پر کوئی پولیس اہلکار زخمی نہیں ہوا۔پولیس نے کہا کہ اغوا کاروں کے قبضے سے تین بچے بازیاب کرالیے گئے جو گاڑی کی ڈگی میں چھپائے گئے تھے۔ تاہم صورت حال اس وقت یکسر تبدیل ہوگئی جب زخمی بچوں کو گاڑی سے نکالاگیااورڈی ایچ کیو ہسپتال منتقل کیا گیا جہاں زخمیوں کو طبی امداد فراہم کی گئی۔زخمی بچوں کو بیان دینے سے روکنے کیلئے ان پر پولیس کاپہرالگادیاگیا۔زخمی بچوں نے طبی امدادفراہم کرنیوالے عملہ کو روتے ہوئے بتایاکہ ان کے والدین کو گولیاں ماردی گئی ہیں وہ لوگ لاہور سے بورے والا جارہے تھے کہ راستے میں پولیس نے ان کی گاڑی پر فائرنگ کی۔عینی شاہدین نے بتایا کہ پولیس نے نہ گاڑی روکی اور نہ تلاشی لی بلکہ ہرجانب سے فائرنگ کردی جس آناََفاناََچاروں کارسواردم توڑگئے اورکارمیں موجود بچے زخمی ہوگئے جنہیں کارروائی کرنیوالے اہلکارزخمی حالت میں نزدیکی پٹرول پر چھوڑگئے ۔دوران تلاشی گاڑی میں سے کپڑوں کا بیگ اورایک استری برآمد ،عینی شاہدین کے مطابق گاڑی سے کوئی اسلحہ برآمد نہیں ہوااورگاڑی سے فائرنگ کے بیان میں کوئی حقیقت نہیں۔نیز ڈگی میں اغواء شدہ بچوں کی موجودگی کا دعویٰ بھی غلط ہے کیونکہ برآمد ہونیوالے بچوں نے ہلاک ہونیوالوں کو اپنے والدین قراردیاہے ۔مقامی تھانہ یوسف والا پولیس نے ہلاک شدگان کی شناخت سے لاعلمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ یہ کارروائی سی ٹی ڈی کی جانب سے کی گئی ہے۔ جس سے مقامی پولیس مکمل لاعلم ۔میڈیا نمائندے جب جائے وقوعہ پر پہنچے توانہیں وہاں موجودلوگوں نے بتایاکہ کارسواروں کو گولیوں کا نشانہ بنانے والے لاشیں اپنے ساتھ لے گئے ہیں۔ہسپتال ذرائع نے لاشوں کی آمد بارے لاعلمی کا اظہارکیاہے ۔اطلاعات کے مطابق خاندان کی ہلاکت کی خبرسنتے ہی دادی صدمے سے چل بسی۔ترجمان صوبائی پولیس کے مطابق ہلاک ہونیوالوں کا تعلق داعش سے تھا اوروہ سابق وزیراعظم یوسف رضاگیلانی کے بیٹے سمیت متعدد ہائی پروفائل کیسوں کے مرکزی کردارتھے جنہوں نے متعدد اعلیٰ پولیس افسران اورعام شہریوں کو دہشت گردانہ کارروائیوں کا نشانہ بنایا۔

اس خبر کی اپ ڈیٹ جاننے کے لیے یہاں کلک کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

2 تبصرے “ساہیوال: معصوم بچوں کے سامنے پولیس نے والدین کو گولیوں سے بھون ڈالا، 2 خواتین سمیت 4 افراد جاں بحق، 3 بچے زخمی، ہلاکت کی خبرسن کر دادی چل بسی۔

اپنا تبصرہ بھیجیں