270

پاکپتن: بد عنوانی کے رویوں کے ساتھ بدعنوانی کا مقابلہ ممکن نہیں. بدعنوانی کے خاتمہ کے عالمی دن کے موقع پر پریس کلب میں مقررین کا خطاب

پاکپتن(وقار فرید جگنو سے) بد عنوانی کے رویوں کے ساتھ بدعنوانی کا مقابلہ ممکن نہیں لوگ کرپشن کے خلاف تقریریں تو کرتے ہیں لیکن کرپشن کی وجوہات اور پیدائش پر بات نہیں کرتے ان خیالات کا اظہار تحریک اینٹی کرپشن کے بانی میاں عبدالرحمن وٹو نے انسداد بدعنوانی کے عالمی دن کے موقع پر تحریک اینٹی کرپشن کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا سیمینار سے پاکستان سوشل ایسوسی ایشن کے سیکرٹری جنرل حکیم لطف اللہ اتحاد بین المسلمین کے صدرمفتی زاہد اسدی، صدر پریس کلب پاکپتن وقار فرید جگنو،پروفیسر محسن رضا جوئیہ،چیئرمین پریس کلب پیر امداد حسین،انجمن فلاح مریضاں کے جنرل سیکرٹری ڈاکٹر شاہد مرتضی چشتی،پاکستان تحریک انصاف کے ضلعی سیکرٹری اطلاعات اظہر محمود اجی خاں نیشنل سٹوڈنٹس فیڈریشن کے رہنما شہزاد وٹو،مستنصر کامران بلوچ، ڈپٹی ڈائریکٹر اینٹی کرپشن ارشد وٹو ودیگر نے بھی خطاب کیا مقررین نے کہا کہ رشوت ایک مُہلک معاشرتی ناسور ہے جو تمام بدعنوانیوں کی جڑ ہے اخلاقی انحطاط کے شکار معاشرہ میں رہتے ہوئے انسان کو قدم قدم پر رشوت ستانی اور بدعنوانی سے واسطہ پڑتا ہے جو لوگ رشوت نہ دیں انہیں اپنے کاموں کے سلسلے میں خواری پریشانی اور مسائل سے دو چار ہونا پڑتا ہے ہمارے معاشرہ میں اعلیٰ عہدیداروں سے قاصد تک مل مالک سے دہاڑی دار معاون تک تقریباً ہر کوئی تر بہ تر ہے اور نچڑ رہا ہے یہاں نئی نسل کی رہنمائی کے لئے شاید کوئی موجود نہیں انھیں مستقبل کی تعمیر کے لئے بڑی توجہ سے اپنے رستے بنانا ہونگے.

میاں عبدالرحمن وٹو کی مکمل تقریر سننے کے لیے یہاں کلک کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں