448

ذیابیطس یا شوگر سے کیسے بچا جائے ؟ (محمد تنویر اسلم .. نیوٹریشنسٹ)

ذیابیطس کے عالمی دن کے موقع پر ایک خصوصی تحریر

تحریر: محمد تنویر اسلم (نیوٹریشنسٹ)
پوری دنیا کے اندر ذیابیطس کے بڑھتے ہوئے مرض سے آگاہی کے لئے ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن نے 1991میں پہلی مرتبہ ذیابیطس کا عالمی دن منانے کا اعلان کیا. ذیابیطس کا عالمی دن ہر سال 14 نومبر کو منایا جاتا ہے دراصل ذیابیطس انسانی خون کے اندر شوگر کے لیول کا بڑھ جانا ہے پاکستان میں بھی ذیابیطس کا مسئل بہت تیزی سے پھیل رہا ہے اس کی بنیادی وجہ صحیح خوراک کا نا کھانا اور صحت مند طرز زندگی سے دوری ہے جو کہ عام طور پر لوگوں کے اندر پائی جاتی ہے. ذیابیطس کے مرض کو بہتر زندگی اور اچھی خوراک سے بلکہ اچھی اور متوازن غذا سے نہ صرف کنٹرول کیا جاسکتا ہے بلکہ ایک صحت مند زندگی گزاری جا سکتی ہے.

ذیابیطس کی بنیادی وجوہات میں سے وزن کا بڑھ جانا شوگر کا زیادہ استعمال کرنا اور انسولین کی رکاوٹ شامل ہیں سست روی اور ورزش کا کم کرنا ذیابیطس ہونے کے امکان زیادہ کر دیتا ہے. ذیابیطس کے بڑھتے مرض کے ساتھ ساتھ عام توہمات نے بھی جنم لیا ہے لوگ گلی محلے کے حکیموں کے مشورے پر مختلف اقسام کی چیزیں استعمال کرتے ہیں جس کی وجہ سے ذیابیطس کے مرض میں کوئی کمی نہیں ہوتی بلکہ اور بہت سی پیچیدگیاں پیدا ہو جاتی ہیں. جو ذیابیطس کے مرض کو خطرناک حد تک بڑھا دیتی ہیں. اس لئے ذیابیطس کے مریضوں کو چاہیے کہ کسی اچھے ماہر غذائیات سے رابطہ کریں،
لہذا سطحی طور پر چند مشوروں پر عمل کرکے ذیابیطس کے مرض کو نہ صرف کم کیا جاسکتا ہے بلکہ ایک اچھی اور صحت مند زندگی گزاری جا سکتی ہے.

ذیابیطس کی دو اقسام بہت اہم ہیں ذیابیطس ٹائپ ون اور ذیابیطس ٹائپ ٹو. ذیابیطس ٹائپ ون خاص طور پر وراثتی بیماری ہے جو کہ والدین سے بچوں کے اندر منتقل ہوتی ہے جبکہ ذیابیطس ٹائپ ٹو طرز زندگی اور متوازن خوراک کا استعمال نہ کرنے کی وجہ سے ہوتی ہے. پاکستان کے اندر زیادہ ذیابیطس ٹائپ ٹو پائی جاتی ہے جس کو متوازن غذا اور اچھے طرز زندگی سے کنٹرول کیا جاسکتا ہے .

درج ذیل کچھ طریقوں پہ عمل کر کے ذیابیطس کے مرض سے بچا جاسکتا ہے :
1. شوگر کا استعمال کم کریں
شوگر بہت جلدی جسم کے اندر جذب ہو جاتی ہے جس کی وجہ سے خون کے اندر شوگر کی مقدار بڑھ جاتی ہے. انسانی جسم کے اندر شوگر کی مقدار کو نارمل رکھنے کے لئے انسولین ہارمون خارج ہوتا ہے جو کہ شوگر کو خون سے انسانی خلیوں کے اندر بھیج دیتا ہے اور شوگر کی مقدار نارمل رہتی ہے. جو لوگ کھانے میں میٹھا لینا پسند کرتے ہیں ان کو چاہیے کہ وہ چینی کی بجائے شہد کا استعمال کریں.
2. روزانہ ورزش کریں
ورزش انسولین کی موجودگی کو بہتر کرتی ہے اور شوگر کی مقدار کو خون کے اندر نارمل رکھتے ہیں ورزش انسولین کی حساسیت کو 85 فیصد تک بڑھا دیتی ہے. مختلف قسم کی ورزش جیسا کہ کھلی ہوا کےاندر چہل قدمی کرنا دوڑنا وزن اٹھانا شامل ہیں 30 منٹ تک روزانہ ورزش کرنا لازمی ہے.
3. پانی کا زیادہ استعمال کریں
ذیابیطس کے مریضوں کو چاہیے کہ وہ انرجی ڈرنکس اور جوس وغیرہ اور میٹھے مشروبات کا استعمال کم کریں. پیاس لگنے کی صورت میں پانی کا استعمال زیادہ کریں. اس سے نہ صرف پانی کی کمی پوری ہوگی بلکہ خون کے اندر شوگر کی مقدار بھی نارمل رہے گی .
4. وزن کو کم کریں
ذیابیطس کے مریضوں کے اندر ایک کلوگرام وزن کم کرنے سے 16 فیصد ذیابیطس ہونے کا امکان کم ہو جاتا ہے اس لئے ذیابیطس کے وہ مریض جن کا وزن زیادہ ہے وزن کو کم کریں. کم وزن کی وجہ سے انسولین کی حساسیت میں بھی اضافہ ہوگا
5. سگریٹ نوشی نہ کریں
سگریٹ نوشی صحت کے بہت سارے مسائل پیدا کرتی ہے جن میں دل کی بیماریوں اور چھاتی اور پھپھڑوں کا کینسر سرفہرست ہیں. ایک تحقیق کے مطابق سگریٹ نوشی کرنے والے میں ذیابیطس کے مرض کا امکان 44فیصد بڑھ جاتا ہے. سگریٹ نوشی کو ترک کر کے ذیابیطس سے بچا جاسکتا ہے .
6. نشاستہ کا استعمال کم کریں
زیادہ نشاستہ والی چیزیں کھانے سے خون کے اندر شوگر کی مقدار بڑھ جاتی ہے چونکہ ذیابیطس کے مریضوں کے اندر انسولین کی مقدار کم ہوتی ہے اس لئے زیادہ شوگر خون کے اندر زیادہ دیر تک موجود رہتی ہے زیادہ نشاستہ والی چیزوں میں گندم , چاول, مکی، جوار، باجرہ اور آلو شامل ہیں بغیر چھانے ہوئے آٹے کی روٹی زیادہ فائدہ مند ہے .
7. کھانے کی مقدار کا خاص خیال رکھیں
ذیابیطس کے مریضوں کو چاہیے کہ ایک ہی وقت میں زیادہ کھانا نہ کھائیں عام طور پر ایک دن کے اندر تین دفعہ کھانا کھایا جاتا ہے لیکن ذیابیطس کے مریضوں کو چاہئے کہ ایک دن کے اندر پانچ سے چھ دفعہ کم مقدار میں کھانا کھائیں. اس سے نہ صرف ان کے جسم کے اندر انسولین کی رکاوٹ کم ہوگی بلکہ شوگر کی مقدار بھی کنٹرول میں رہے گی.
8. سست روی سے بچیں
ورزش کا نہ کرنا اور سست روی کی وجہ سے ایک ہی جگہ پر زیادہ دیر بیٹھے رہنا ذیابیطس کے امکان کو زیادہ کر دیتا ہے. ایک تحقیق کے مطابق سست روی سسے ذیابیطس کے امکان 90 فیصد زیادہ ہو جاتے ہیں.
9. ریشے دار خوراک کا استعمال زیادہ کریں
ریشہ دار خوراک نظام انہضام میں بہت کارآمد ثابت ہوتی ہے. اس کے علاوہ خون کے اندر شوگر کی مقدار کو بھی کنٹرول کرتے ہیں. ریشہ دار خوراک کو زیادہ کرنے کے لئے پھلوں اور سبزیوں کا استعمال زیادہ کریں. اس لئے خوراک کے اندر کچی سبزیوں کا سلاد استعمال کریں ریشہ دار خوراک بھوک کے احساس کو کم کرتی ہے.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں