234

سیاسی جماعتیں اپنے اندر سماجی ونگ بنائیں. حکیم لطف اللہ

پاکپتن (پریس ریلیز) سیاسی جماعتیں اپنے اندر سماجی ونگ بنائیں یہ مطالبہ حکیم لطف اللہ مرکزی سیکرٹری جنرل پاکستان سوشل ایسوسی ایشن نے جاری کردہ پریس ریلیز میں کیا ہے . ان کا کہنا تھا کہ سیاسی جماعتیں ملک بھر میں سماجی ونگ بنا کر سماجی انقلاب برپا کر سکتی ہیں. سیاسی جماعتیں ملک میں خدمت خلق کے جذبے کو بھی اجاگر کریں اور اسکی ترغیب دیں جس سے مخلوق خدا کی بھلائی ہو گی جماعتیں مضبوط ہوں گی اور عوام کے درمیان فاصلے کم ہوں گے اور ان کے ہر دکھ درد میں براہ راست شریک ہوں گے. ملک بھر میں کوئی بھی آفت یا حادثہ پیش آجائے تو سماجی اور مذہبی تنظیمیں اس میں بڑھ چڑھ کر حصہ لیتی ہیں اور سیاسی جماعتیں ہاتھ پر ہاتھ دھرے بیٹھی ہوتیں ہیں اور صرف افسوس کرنے کی حد تک عوام کو پیغامات بھیجتے ہیں جس سے عوام کو کچھ حاصل نہیں ہوتا اور ان سیاسی جماعتوں میں کچھ درد دل رکھنے والے کارکنان ان سماجی تنظیموں و مذہبی جماعتوں کے ساتھ مل کر اپنے سماجی جذبے کی تکمیل کرتے ہیں. سیاسی جماعتوں کے اندر سماجی ونگ نہ ہونےکی وجہ سے معاشرے میں سما جی خلاء اور فقدان بڑھ رہا ہے اور کچھ نا پسندیدہ لوگ اس میں سامنے آ رہے ہیں پاکستانی قوم میں بحیثیت مسلمان دنیا بھر میں خدمت خلق اور خیرات کرنے کا جذبہ بہت زیادہ پایا جاتا ہے اور دنیا بھر میں خیرات سب سے زیادہ پاکستان میں دی جاتی ہے . جبکہ اس کا باقائدہ کوئی حساب کتاب نہیں رکھا جاتا۔ ہمارے خیرات دینے کے جذبے نے ملک میں پیشہ ور بھیکاریوں کی تعداد میں بے پناہ اضافہ کر دیا ھے۔ پیشہ ور بھیکاریوں کو خیرات دینا اور ان کا خیرات لینا قانوناً جرم ہے۔ خیرات ہمیشہ مستحق اور حق دار لوگوں اور اداروں تک پہنچائیں۔ حکومت اور سیاسی جماعتیں اگر اس مسلہ پر توجہ دیں تو سماجی انقلاب برپا ہو سکتا ہے. سیاسی جماعتیں اپنے اندر سماجی ونگ بنائیں اور زیادہ سے زیادہ لوگوں کی ممبر شپ کریں اور حکومت سیاسی جماعتیں اور عوام آپس میں تنظیمی شعور کو بیدار کر کے اپنے اندر فاصلوں کو کم کریں.

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں