353

چاہت کو تیری آقا مَیں دل میں بسا لوں (نعت شریف)

شاعرہ. شگفتہ یاسمین …. چیچہ وطنی

چاہت کو تیری آقا مَیں دل میں بسا لوں
اور خاکِ مدینہ کو پلکوں میں سجا لوں
بندھ جائے کبھی میرا بھی جانے کا سفینہ
خوابوں میں ہی ہو جائے جو دیدارِ مدینہ
سُفنہ دیکھوں تو آنکھوں میں چھپا لوں
چاہت کو تیری آقا میں دل میں بسا لوں
اور خاکِ مدینہ کو پلکوں میں سجا لوں
آئے جو بلاوا مجھے کبھی تیرے در سے
خوشیوں بھری جھولی ملے تیرے گھر سے
روضے کو جو میں اپنے سینے سے لگا لوں
چاہت کو تیری آقا میں دل میں بسا لوں
اور خاکِ مدینہ کو پلکوں میں سجا لوں
نگاہوں میں جو بَس جائے گنبد کا نظارہ
مدینے بُلا لے آقا نہیں ہوتا ہے گزارہ
سُنت تیری میں اپنے عملوں میں رچا لوں
چاہت کو تیری آقا میں دل میں بسا لوں
اور خاکِ مدینہ کو پلکوں میں سجا لوں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں