421

مجھے حسین نظر آنا ہے………مگر کیسے؟؟

ایران(سوشل میڈیا) دنیا بھر میں حسین نظر آنے کے لیے پلاسٹک سرجری کا سہارا لینا کوئی انوکھی بات نہیں لیکن ایرانی معاشرے میں ناک کو تمام زوایوں سے خوبصورت بنوانے کے لیے سالانہ 24 ہزار آپریشن ہوتے ہیں. ایران کے سرکاری اشاریوں سے واضح ہوتا ہے کہ پورے ملک میں سالانہ تقریباً 40 ہزار پلاسٹک سرجری پر مبنی آپریشن ہوتے ہیں جن میں 40 فیصد محض ناک کی سرجری کے ہوتے ہیں۔ ایرانی معاشرے میں خواتین اپنے حسن و زیبائش پرخصوصی توجہ دیتی ہیں اور ان کے لیے ناک کی خوبصورتی تمام دیگر اعضاء کی خوبصورتی سے زیادہ اہمت ہوتی ہے. حکومت کی جانب سے پیش کردہ اعداد و شمار کے مقابلے میں حقیقی اعدادوشمار کہیں زیادہ ہیں کیونکہ متعدد غیر ملکی ڈاکٹرز امیر زادی ایرانی خواتین سے پیسہ کمانے کے لیے غیر رجسٹرڈ آپریشن بھی کرتے ہیں۔ ایران کے متعدد شہروں اور مصافات میں بڑی تعداد میں غیر رجسٹرڈ کلینک موجود ہیں جہاں رعایتی قیتموں میں پلاسٹک سرجری اور لیپوسکشن ہوتا ہے۔ لیپوسکشن جسم سے اضافی چربی نکالنے اور اسے متوازن بنانے کے لیے کی جاتی ہے. ایران میں ناک کی پلاسٹک سرجری کرانا معیوب بات نہیں سمجھی جاتی بلکہ متعدد خواتین ناک پر سفید پٹی باندھے گھومتی نظر آتی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں